Showing posts with label Urdu Hindi Poetry. Show all posts
Showing posts with label Urdu Hindi Poetry. Show all posts

Thursday, January 1, 2015

Qissa abih

قصہ ابھی حجاب سے آگے نہیں بڑھا 
میں آپ ، وہ جناب سے آگے نہیں بڑھا

Qissa Abhi Hijab Se Aage Nahin Barha,
Main Aap, Wo Janab Se Aage Nahin Barha..

مدت ہوئی کتاب محبت شروع کیے 
لیکن میں پہلے باب سے آگے نہیں بڑھا

Muddat Hui Kitab-e-Mohabat Shuroo Kiye,
Lekin Main Pehle Baab Se Aage Nahin Barha..

لمبی مسافتیں ہوں مگر اس سوار کا 
پاؤں ابھی راقاب سے آگے نہیں بڑھا

Lambhi Musaftain Hain Magar Is Sawaar Ka,
Paaon Abhi Rakaab Se Aage Nahin Barha..

لوگوں نے سنگ و خشت کے قلعے بنا لیے 
اپنا محل تو خواب سے آگے نہیں بڑھا

Logon Ne Sang-o-Khasht K Qiley Bna Liye,
Apna Mehal To Khwab Se Aage Nahin Barha..

وہ تیری چال ڈھال کے باری میں کیا کہے 
جو اپنے احتساب سے آگے نہیں بڑھا

Wo teri chal dahl kay bari mai kiya kahy
Jo Apne Ehtisab Se Aage Nahi Barha..

طول ای کلام کے لیے میں نے کئے سوال
وہ مختصر جواب سے آگے نہیں بڑھا

Tool-e-Kalaam K Liye Maine Kiye Sawal,
Wo Mukhtasar Jawab Se Aage Nahin Barha..

رخصار کا پتہ نہیں آنکھیں تو خوب ہیں 
دیدار ابھی نقاب سے آگے نہیں بڑھا

Rukhsar Ka Pata Nahin, Ankhain To Khoob Hain,
Deedar Abhi Naqaab Se Aage Nahin Barha..

وہ لذّت ای گناہ سے محروم ہی رہا 
جو خواہش ثواب سے آگے نہیں بڑھا . . . !

Wo Lazzat-e-Gunah Se Mehroom Reh Gaya...
Jo Khwahish-e-Sawab Se Aage Nahin Barha..

Posted by: Muhammad Zaheer Sharief

Friday, December 5, 2014

Halat Parishan Tuh Guzar Jayeng Ge Ek Rooz..
Ehbab Kay Honton Ki Hansiiiiiii Yad Rahy Gi...

Friday, November 28, 2014

Tuje se Muhabbat teri awoqat ce ziyadah ki thi
Ab  Bat  Nafrat  ki  hy  Soch  Tera  kiya  hoga

Monday, November 24, 2014

Ek Din Hum Sub Ek Dusray Ko Yeh Soch kr Koh Deng Ge Keh Jab Wo Yaad Nahi Krta hy Toh Main Ussay Q Yaad Karon....

Friday, August 22, 2014

Ajeeb hy rang chaman, ja baja udaasi hy



Udaas Gazal
عجب ہے رنگ ِ چمن، جا بجا اُداسی ہے
مہک اُداسی ہے، باد ِ صبا اُداسی ہے
نہیں نہیں، یہ بھلا کس نے کہہ دیا تم سے؟
میں ٹھیک ٹھاک ہوں، ہاں بس ذرا اُداسی ہے
میں مبتلا کبھی ہوتا نہیں اُداسی میں
میں وہ ہوں جس میں کہ خود مبتلا اُداسی ہے
طبیب نے کوئی تفصیل تو بتائی نہیں
بہت جو پوچھا تو اتنا کہا، اُداسی ہے
گداز ِ قلب خوشی سے بھلا کسی کو ملا؟
عظیم وصف ہی انسان کا اداسی ہے
شدید درد کی رو ہے رواں رگ ِ جاں میں
بلا کا رنج ہے، بے انتہا اُداسی ہے
فراق میں بھی اُداسی بڑے کمال کی تھی
پس ِ وصال تو اُس سے سِوا اداسی ہے
تمہیں ملے جو خزانے، تمہیں مبارک ہوں
مری کمائی تو یہ بے بہا اُداسی ہے
چھپا رہی ہو مگر چھپ نہیں رہی مری جاں
جھلک رہی ہے جو زیر ِ قبا اُداسی ہے
دماغ مجھ کو کہاں کائناتی مسئلوں کا
مرا تو سب سے بڑا مسئلہ اُداسی ہے
فلک ہے سر پہ اُداسی کی طرح پھیلا ہُوا
زمیں نہیں ہے مرے زیر ِ پا، اُداسی ہے
غزل کے بھیس میں آئی ہے آج محرم ِ درد
سخن کی اوڑھے ہوئے ہے ردا، اُداسی ہے
عجیب طرح کی حالت ہے میری بے احوال
عجیب طرح کی بے ماجرا اُداسی ہے
وہ کیف ِ ہجر میں اب غالباً شریک نہیں
کئی دنوں سے بہت بے مزا اُداسی ہے
وہ کہہ رہے تھے کہ شاعر غضب کا ہے عرفان
ہر ایک شعر میں کیا غم ہے، کیا اُداسی ہے



Wednesday, August 13, 2014

یہ جو چہرے سے تمہیں لگتے ہیں بیمار سے ہم

Productiveblogtips.blogspot.com

ye jo chehre se tumhen lagte hain beemar se hum
خوب روئے ہیں لپٹ کر درو دیوار  سے ہم
khob  roye  hain  lipat  kar  dar-o-deewar se  hum
یار کی آنکھ میں نفرت نے قتل کیا
yar  ki  aankh  main  nafrat  ne  hamain  qatl  kiya
کون کہتا ہےکاٹے یار کی تلوار سے ہم
kon  kehta  hai  kate  yar  ki  talwaar  se  hum
رنج ہر رنگ ک جولی میں بھرے ہٰیں ہم نے
ranj  har  rang  k  jholi  main  bhare  hain  hum ne
جب بھی گزرے ہیں کسی درد کے بازار سے ہم
 jab bhi guzre  hain  kisi  dard  k  bazaar  se  hum
عشق میں حکم عدولی بھی ہمیں آتی ہے
ishq  main  hukm  adooli  bhi  hamain  ati   hai
ٹالنے والے تو نہیں ہیں تیرے انکار سے ہم
talne  wale  to  nahi  hain  tere  inkaar   se  hum
  

یہ جو چہرے سے تمہیں لگتے ہیں بیمار سے ہم 

Post by
Muhammad Zaheer